برہمن بت کدے کے شیخ بیت اللہ کے صدقے

محمد رفیع سودا

برہمن بت کدے کے شیخ بیت اللہ کے صدقے

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    برہمن بت کدے کے شیخ بیت اللہ کے صدقے

    کہیں ہیں جس کو سوداؔ وہ دل آگاہ کے صدقے

    جتا دیں جس جگہ ہم قدر اپنی ناتوانی کی

    اگر کہسار واں ہووے تو جاوے کاہ کے صدقے

    نہ دے تکلیف جلنے کی کسو کے دل کو میرے پر

    اثر سے دور رہتی ہیں میں اپنی آہ کے صدقے

    عجائب شغل میں تھے رات تم اے شیخ رحمت ہے

    میں اس ریش بلند اور دامن کوتاہ کے صدقے

    نہیں بے وجہ کوچے سے ترے اٹھنا بگولے کا

    ہماری خاک بھی جاتی ہے تیری راہ کے صدقے

    کبھو وہ شب بھی اے پروانہ حق باہم دکھاوے گا

    تو بل بل شمع پر جاوے میں ہوں اس ماہ کے صدقے

    دکھاتی ہے تجھے کس کس طرح سوداؔ کی نظروں میں

    جو ہو انصاف تو جاوے تو اس کی چاہ کے صدقے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY