بستی میں ہے وہ سناٹا جنگل مات لگے

قیصر الجعفری

بستی میں ہے وہ سناٹا جنگل مات لگے

قیصر الجعفری

MORE BYقیصر الجعفری

    بستی میں ہے وہ سناٹا جنگل مات لگے

    شام ڈھلے بھی گھر پہنچوں تو آدھی رات لگے

    مٹھی بند کئے بیٹھا ہوں کوئی دیکھ نہ لے

    چاند پکڑنے گھر سے نکلا جگنو ہات لگے

    تم سے بچھڑے دل کو اجڑے برسوں بیت گئے

    آنکھوں کا یہ حال ہے اب تک کل کی بات لگے

    تم نے اتنے تیر چلائے سب خاموش رہے

    ہم تڑپے تو دنیا بھر کے الزامات لگے

    خط میں دل کی باتیں لکھنا اچھی بات نہیں

    گھر میں اتنے لوگ ہیں جانے کس کے ہات لگے

    ساون ایک مہینے قیصرؔ آنسو جیون بھر

    ان آنکھوں کے آگے بادل بے اوقات لگے

    مأخذ :
    • کتاب : Karwaan-e-Ghazal (Pg. 328)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY