بستیاں ڈھونڈھ رہی ہیں انہیں ویرانوں میں

فراق گورکھپوری

بستیاں ڈھونڈھ رہی ہیں انہیں ویرانوں میں

فراق گورکھپوری

MORE BY فراق گورکھپوری

    بستیاں ڈھونڈھ رہی ہیں انہیں ویرانوں میں

    وحشتیں بڑھ گئیں حد سے ترے دیوانوں میں

    نگۂ ناز نہ دیوانوں نہ فرزانوں میں

    جان کار ایک وہی ہے مگر انجانوں میں

    بزم مے بے خود و بے تاب نہ کیوں ہو ساقی

    موج بادہ ہے کہ درد اٹھتا ہے پیمانوں میں

    میں تو میں چونک اٹھی ہے یہ فضائے خاموش

    یہ صدا کب کی سنی آتی ہے پھر کانوں میں

    سیر کر اجڑے دلوں کی جو طبیعت ہے اداس

    جی بہل جاتے ہیں اکثر انہیں ویرانوں میں

    وسعتیں بھی ہیں نہاں تنگئ دل میں غافل

    جی بہل جاتے ہیں اکثر انہیں میدانوں میں

    جان ایمان جنوں سلسلہ جنبان جنوں

    کچھ کشش ہائے نہاں جذب ہیں ویرانوں میں

    خندۂ صبح ازل تیرگیٔ شام ابد

    دونوں عالم ہیں چھلکتے ہوئے پیمانوں میں

    دیکھ جب عالم ہو کو تو نیا عالم ہے

    بستیاں بھی نظر آنے لگیں ویرانوں میں

    جس جگہ بیٹھ گئے آگ لگا کر اٹھے

    گرمیاں ہیں کچھ ابھی سوختہ سامانوں میں

    وحشتیں بھی نظر آتی ہیں سر پردۂ ناز

    دامنوں میں ہے یہ عالم نہ گریبانوں میں

    ایک رنگینیٔ ظاہر ہے گلستاں میں اگر

    ایک شادابیٔ پنہاں ہے بیابانوں میں

    جوہر غنچہ و گل میں ہے اک انداز جنوں

    کچھ بیاباں نظر آئے ہیں گریبانوں میں

    اب وہ رنگ چمن و خندۂ گل بھی نہ رہے

    اب وہ آثار جنوں بھی نہیں دیوانوں میں

    اب وہ ساقی کی بھی آنکھیں نہ رہیں رندوں میں

    اب وہ ساغر بھی چھلکتے نہیں مے خانوں میں

    اب وہ اک سوز نہانی بھی دلوں میں نہ رہا

    اب وہ جلوے بھی نہیں عشق کے کاشانوں میں

    اب نہ وہ رات جب امیدیں بھی کچھ تھیں تجھ سے

    اب نہ وہ بات غم ہجر کے افسانوں میں

    اب ترا کام ہے بس اہل وفا کا پانا

    اب ترا نام ہے بس عشق کے غم خانوں میں

    تا بہ کے وعدۂ موہوم کی تفصیل فراقؔ

    شب فرقت کہیں کٹتی ہے ان افسانوں میں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    بھارتی وشوناتھن

    بھارتی وشوناتھن

    مآخذ:

    • Book : Gul-e-Naghma (Pg. 76)
    • Author : Firaq Gorakhpuri
    • مطبع : Maktaba Farogh-e-urdu Matia Mahal Jama Masjid Delhi (2006)
    • اشاعت : 2006

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY