بیاں جب کلیمؔ اپنی حالت کرے ہے

کلیم عاجز

بیاں جب کلیمؔ اپنی حالت کرے ہے

کلیم عاجز

MORE BYکلیم عاجز

    بیاں جب کلیمؔ اپنی حالت کرے ہے

    غزل کیا پڑھے ہے قیامت کرے ہے

    بھلا آدمی تھا پہ نادان نکلا

    سنا ہے کسی سے محبت کرے ہے

    کبھی شاعری اس کو کرنی نہ آتی

    اسی بے وفا کی بدولت کرے ہے

    چھری پر چھری کھائے جائے ہے کب سے

    اور اب تک جئے ہے کرامت کرے ہے

    کرے ہے عداوت بھی وہ اس ادا سے

    لگے ہے کہ جیسے محبت کرے ہے

    یہ فتنے جو ہر اک طرف اٹھ رہے ہیں

    وہی بیٹھا بیٹھا شرارت کرے ہے

    قبا ایک دن چاک اس کی بھی ہوگی

    جنوں کب کسی کی رعایت کرے ہے

    مآخذ
    • کتاب : vo jo shairi ka sabab hua (Pg. 395)
    • Author : Kaliim aajiz

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY