بے بلائے ہوئے جانا مجھے منظور نہیں

مرزارضا برق ؔ

بے بلائے ہوئے جانا مجھے منظور نہیں

مرزارضا برق ؔ

MORE BYمرزارضا برق ؔ

    بے بلائے ہوئے جانا مجھے منظور نہیں

    ان کا وہ طور نہیں میرا یہ دستور نہیں

    لن ترانی کے یہ معنی ہیں بجا ہے دعویٰ

    دیکھے بے پردہ تجھے کوئی یہ مقدور نہیں

    وہ کہاں تاج کہاں تخت کہاں مال و منال

    قابل اب بھیک کے بھی کاسۂ فغفور نہیں

    بے عبادت نہ خدا بخشے گا سبحان اللہ

    ایسی فردوس سے ہم گزرے کہ مزدور نہیں

    میں وہ مے کش ہوں نہ رکھوں کبھی بھولے سے قدم

    کوئی کہہ دے یہ اگر خلد میں انگور نہیں

    دم بہ دم اٹھتے ہیں طوفان جو برقؔ اشکوں کے

    نوح کا وقت نہیں آنکھ ہے تنور نہیں

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل,

    فصیح اکمل

    بے بلائے ہوئے جانا مجھے منظور نہیں فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے