بے غرض تجھ سے جو ملتا ہوگا

کمال جعفری

بے غرض تجھ سے جو ملتا ہوگا

کمال جعفری

MORE BYکمال جعفری

    بے غرض تجھ سے جو ملتا ہوگا

    اس کا دل پیار کا دریا ہوگا

    شک جو احباب پہ کرتا ہوگا

    اس کو اپنے پہ بھی دھوکا ہوگا

    صاف ابھر آئے خد و خال اس کے

    چہرہ آئینے میں دیکھا ہوگا

    دے دیا وقت پہ دھوکا اس نے

    جس کو سمجھا تھا کہ اپنا ہوگا

    وہ جو خاموش ہے مغموم بھی ہے

    اس نے ہر بات پہ سوچا ہوگا

    آج ہم آپ سلامت ہیں تو بس

    کس کو معلوم کہ کل کیا ہوگا

    کیا کمالؔ اس کی خبر ہے تجھ کو

    کل کتابوں میں تو بکھرا ہوگا

    مآخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY