بے کراں دشت بے صدا میرے

زیب غوری

بے کراں دشت بے صدا میرے

زیب غوری

MORE BYزیب غوری

    بے کراں دشت بے صدا میرے

    آ کھلے بازوؤں میں آ میرے

    صاف شفاف سبز فرش ترا

    گرد آلودہ دست و پا میرے

    سرکش و سر بلند بام ترا

    سرنگوں شہپر ہوا میرے

    بے ستوں خیمۂ ثبات ترا

    محو صحرا نقوش پا میرے

    شب ہجراں کہ لا زوال تری

    غم کہ آمادۂ فنا میرے

    دشت و دریا سبھی خموش ہوئے

    زمزمہ سنج و ہم نوا میرے

    میں پیمبر ترا نہیں لیکن

    مجھ سے بھی بات کر خدا میرے

    ایک اک تارا جانتا ہے مجھے

    ہیں سبھی زیبؔ آشنا میرے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY