بے خواب دریچوں میں کسی رنگ محل کے

خورشید احمد جامی

بے خواب دریچوں میں کسی رنگ محل کے

خورشید احمد جامی

MORE BYخورشید احمد جامی

    بے خواب دریچوں میں کسی رنگ محل کے

    فانوس جلائے ہیں امیدوں نے غزل کے

    یادوں کے درختوں کی حسیں چھاؤں میں جیسے

    آتا ہے کوئی شخص بہت دور سے چل کے

    دکھ درد کے جلتے ہوئے آنگن میں کھڑا ہوں

    اب کس کے لیے خلوت جاناں سے نکل کے

    سوچوں میں دبے پاؤں چلے آتے ہیں اکثر

    بچھڑی ہوئی کچھ سانولی شاموں کے دھندلکے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY