Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

بے مروت بے وفا نامہرباں نا آشنا

میر محمدی بیدار

بے مروت بے وفا نامہرباں نا آشنا

میر محمدی بیدار

MORE BYمیر محمدی بیدار

    بے مروت بے وفا نامہرباں نا آشنا

    جس کے یہ اوصاف کوئی اس سے ہو کیا آشنا

    تنگ ہو سائے سے اپنے جس کو ہو نا آشنا

    وہ بت وحشی طبیعت کس کا ہوگا آشنا

    واہ واہ اے دل بر کج فہم یوں ہی چاہئے

    ہم سے ہو نا آشنا غیروں سے ہونا آشنا

    بد مزاجی ناخوشی آزردگی کس واسطے

    گر برے ہم ہیں تو ہو جئے اور سے جا آشنا

    یہ ستم یہ درد یہ غم اور الم مجھ پر ہوا

    کاش کہ تجھ سے میں اے ظالم نہ ہوتا آشنا

    نے ترحم نے کرم نے مہر ہے اے بے وفا

    کس توقع پر بھلا ہو کوئی تیرا آشنا

    آشنا کہنے کو یوں تو آپ کے ہوویں گے سو

    پر کوئی اے مہرباں ایسا نہ ہوگا آشنا

    خیر خواہ و مخلص و فدوی جو کچھ کہئے سو ہوں

    عیب کیا ہے گر رہے خدمت میں مجھ سا آشنا

    آشنائی کی توقع کس سے ہو بیدارؔ پھر

    ہو گیا بیگانہ جب ایسا ہی اپنا آشنا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے