بے تعلق زندگی اچھی نہیں

حفیظ جالندھری

بے تعلق زندگی اچھی نہیں

حفیظ جالندھری

MORE BYحفیظ جالندھری

    بے تعلق زندگی اچھی نہیں

    زندگی کیا موت بھی اچھی نہیں

    آج بھی پایا ہے ان کو بد مزاج

    صورت حالات ابھی اچھی نہیں

    حسرت دل دیکھ آنکھوں میں نہ بیٹھ

    اس قدر بے پردگی اچھی نہیں

    میں نہ کہتا تھا دل خانۂ خراب

    دلبروں سے دل لگی اچھی نہیں

    سیر کیجے حسن کے بازار کی

    ہاں مگر آوارگی اچھی نہیں

    دل لگاؤ تو لگاؤ دل سے دل

    دل لگی ہی دل لگی اچھی نہیں

    یہ ہوا یہ ابر یہ سبزہ حفیظؔ

    آج پینے میں کمی اچھی نہیں

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Hafeez Jalandhari (Pg. 196)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY