Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

بے ترے جان نہ تھی جان مری جان کے بیچ

شیخ ظہور الدین حاتم

بے ترے جان نہ تھی جان مری جان کے بیچ

شیخ ظہور الدین حاتم

MORE BYشیخ ظہور الدین حاتم

    بے ترے جان نہ تھی جان مری جان کے بیچ

    آن کر پھر کے جلایا تو مجھے آن کے بیچ

    ایک دن ہاتھ لگایا تھا ترے دامن کو

    اب تلک سر ہے خجالت سے گریبان کے بیچ

    تو نے دیکھا نہ کبھی پیار کی نظروں سے مجھے

    جی نکل جائے گا میرا اسی ارمان کے بیچ

    آج عاشق کے تئیں کیوں نہ کہے تو در در

    واسطہ یہ ہے کہ موتی ہے ترے کان کے بیچ

    ہوئی زباں لال ترے ہاتھ سے کھا کے بیڑا

    کیا فسوں پڑھ کے کھلایا تھا مجھے پان کے بیچ

    کچھ تو مجنوں کو حلاوت ہے وہاں دیوانو

    چھوڑ شہروں کو جو پھرتا ہے بیابان کے بیچ

    دیکھ حاتمؔ کو بھلا تو نے برا کیوں مانا

    کیا خلل اس نے کیا آ کے تری شان کے بیچ

    مأخذ :
    • کتاب : Diwan Zadah (Pg. 158)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے