بے وجہ نہیں گرد پریشاں پس محفل

مرزا محمد تقی ہوسؔ

بے وجہ نہیں گرد پریشاں پس محفل

مرزا محمد تقی ہوسؔ

MORE BYمرزا محمد تقی ہوسؔ

    بے وجہ نہیں گرد پریشاں پس محفل

    آتا ہے کوئی بے سر و ساماں پس محفل

    از بس کشش عشق سے آگاہ تھی لیلیٰ

    تھی دیکھتی وہ فتنۂ دوراں پس محفل

    کس سوختہ کی خاک سے اٹھا ہے بگولا

    اک شعلۂ جوالہ ہے پیچاں پس محفل

    فکر قدم ناقہ ہوا قیس کو پیدا

    دیکھا جو ہیں صحرائے مغیلاں پس محفل

    اے ناقہ کش اتنی بھی نہ تو تیز روی کر

    مجنوں ز خود و رفتہ ہے نالاں پس محفل

    شاید میں اسے دیکھوں ہوسؔ با لب خنداں

    جاتا ہوں اس امید پہ گریاں پس محفل

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY