بے چین جو رکھتی ہے تمہیں چاہ کسو کی

محمد رفیع سودا

بے چین جو رکھتی ہے تمہیں چاہ کسو کی

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    بے چین جو رکھتی ہے تمہیں چاہ کسو کی

    شاید کہ ہوئی کارگر اب آہ کسو کی

    اس چشم کا غمزہ جو کرے قتل دو عالم

    گوشے کو نگہ کے نہیں پرواہ کسو کی

    زلفوں کی سیاہی میں کچھ اک دام تھے اپنے

    قسمت کہ ہوئی رات وہ تنخواہ کسو کی

    کیا مصرف بے جا سے فلک کو ہے سروکار

    وہ شے کسو کو دے جو ہو دل خواہ کسو کی

    دنیا سے گزرنا ہی عجب کچھ ہے کہ جس میں

    کوئی نہ کبھو روک سکے راہ کسو کی

    چھینے سے غم عشق شکیبائی و آرام

    اے دل یہ پڑی لٹتی ہے بنگاہ کسو کی

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    بے چین جو رکھتی ہے تمہیں چاہ کسو کی فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY