صنم ہزار ہوا تو وہی صنم کا صنم

سراج اورنگ آبادی

صنم ہزار ہوا تو وہی صنم کا صنم

سراج اورنگ آبادی

MORE BY سراج اورنگ آبادی

    صنم ہزار ہوا تو وہی صنم کا صنم

    کہ اصل ہستی نابود ہے عدم کا عدم

    اسی جہان میں گویا مجھے بہشت ملی

    اگر رکھو گے مرے پر یہی کرم کا کرم

    ابھی تو تم نے کئے تھے ہماری جاں بخشی

    پھر ایک دم میں وہی نیمچا علم کا علم

    وو گل بدن کا عجب ہے مزاج رنگا رنگ

    فجر کوں لطف تو پھر شام کوں ستم کا ستم

    نہ رکھ سراجؔ کسی خوب رو سیں چشم وفا

    صنم ہزار ہوا تو وہی صنم کا صنم

    مآخذ:

    • Book: Kulliyat-e-Siraj (Pg. 460)
    • Author: Siraj Aurangabadi
    • مطبع: Qaumi Council Baraye-Farogh Urdu (1982,1998)
    • اشاعت: 1982,1998

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites