Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

بھاگ کہ منزل قرار عمر کی رہ گزر نہیں

ناطق گلاوٹھی

بھاگ کہ منزل قرار عمر کی رہ گزر نہیں

ناطق گلاوٹھی

MORE BYناطق گلاوٹھی

    بھاگ کہ منزل قرار عمر کی رہ گزر نہیں

    اس میں فرار کے سوا اور کوئی مفر نہیں

    ہے تو بلائے زندگی رسم وفا مگر نہیں

    بات یہ ہے کہ خیر سے شر پہ مری نظر نہیں

    شیخ جزائے کار خیر یہ جو بتا رہا ہے آج

    بات تو خوب ہے مگر آدمی معتبر نہیں

    بہر حصول مدعا رات دن ایک کیجئے

    راہ طلب کے واسطے شام نہیں سحر نہیں

    رہتے ہیں دور دور ہم رسم و رواج زیست سے

    چلتے ہیں جس پہ عام لوگ اپنی وہ رہ گزر نہیں

    چھوڑ بھی دیتے محتسب ہم تو یہ شغل مے کشی

    ضد کا سوال ہے تو پھر جا اسی بات پر نہیں

    کون ہے جو نہیں شکار اس میں خیال خام کا

    کیا ہے یہ بزم زندگی دام فریب اگر نہیں

    ناطقؔ نیم جاں اگر ہے بھی تو صبح و شام کا

    کل تو خراب حال تھا آج کچھ خبر نہیں

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے