بھنور میں مشورے پانی سے لیتا ہوں

سرفراز زاہد

بھنور میں مشورے پانی سے لیتا ہوں

سرفراز زاہد

MORE BYسرفراز زاہد

    بھنور میں مشورے پانی سے لیتا ہوں

    میں ہر مشکل کو آسانی سے لیتا ہوں

    جہاں دانائی دیتی ہے کوئی موقع

    وہاں میں کام نادانی سے لیتا ہوں

    وہ منصوبے ہیں کچھ آباد ہونے کے

    میں جن پر رائے ویرانی سے لیتا ہوں

    اب اپنے آبلوں کی گھاٹیوں سے بھی

    سمندر دیکھ آسانی سے لیتا ہوں

    نہیں لیتا مگر لینے پہ آؤں تو

    میں بدلہ آگ کا پانی سے لیتا ہوں

    نظر انداز کر دیتی ہے جب دنیا

    جنم خود اپنی حیرانی سے لیتا ہوں

    جہاں مشکل میں پڑ جاتے ہیں گرد و پیش

    وہاں میں سانس آسانی سے لیتا ہوں

    لگاتا ہے مری بینائی پر تہمت

    میں فتوے جس کی عریانی سے لیتا ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY