بھیس کیا کیا نہ زمانے میں بنائے ہم نے

سلیمان اریب

بھیس کیا کیا نہ زمانے میں بنائے ہم نے

سلیمان اریب

MORE BYسلیمان اریب

    بھیس کیا کیا نہ زمانے میں بنائے ہم نے

    ایک چہرے پہ کئی چہرے لگائے ہم نے

    اس تمنا میں کہ اس راہ سے تو گزرے گا

    دیپ ہر راہ میں ہر رات جلائے ہم نے

    دل سے نکلی نہ خراش غم ایام کی دھوپ

    تیرے ناخن سے کئی چاند بنائے ہم نے

    دامن یار نے حق اپنا جتایا نہ کبھی

    اشک امڈے بھی تو پلکوں میں چھپائے ہم نے

    خود ہوئے غرق زمانے کو بھی غرقاب کیا

    ایک آنسو سے وہ طوفان اٹھائے ہم نے

    تیرے پہلو سے بھی پہنچے نہ ترے پہلو تک

    فاصلے قرب کے گو لاکھ گھٹائے ہم نے

    چہرے کتبے سہی کتبوں کی عبارت پہ نہ جا

    ابھی لفظوں سے کہاں پردے اٹھائے ہم نے

    شعر کہنے سے نہ محبوب نہ دنیا ہی ملی

    عمر بھر شعر کہے شعر سنائے ہم نے

    مأخذ :
    • کتاب : Aazadi Ke Baad Urdu Gazal (Pg. 285)
    • Author : Shamshurrahman Farooqi
    • مطبع : NCPUL (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY