بھیگی پلکوں پہ خواب چھوڑ گیا

جلیل ارشد خاں راشد

بھیگی پلکوں پہ خواب چھوڑ گیا

جلیل ارشد خاں راشد

MORE BYجلیل ارشد خاں راشد

    بھیگی پلکوں پہ خواب چھوڑ گیا

    رتجگوں کے عذاب چھوڑ گیا

    خار سارے سمیٹ کر اک شخص

    اپنے پیچھے گلاب چھوڑ گیا

    نشۂ وصل اب بھی باقی ہے

    جانے کیسی شراب چھوڑ گیا

    ڈھونڈتے پھر رہے ہیں ہم اس کو

    جب سے عہد شباب چھوڑ گیا

    عہد رنگیں گزر گیا راشدؔ

    پیچھے فکر حساب چھوڑ گیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY