بگڑی ہوئی جو بزم سخن تھی سنبھل گئی

شوق اثر رامپوری

بگڑی ہوئی جو بزم سخن تھی سنبھل گئی

شوق اثر رامپوری

MORE BYشوق اثر رامپوری

    بگڑی ہوئی جو بزم سخن تھی سنبھل گئی

    کیا بات تھی جو میری زباں سے نکل گئی

    کیوں ہو گئی ہیں دونوں کی راہیں الگ الگ

    میں وہ نہیں رہا کہ یہ دنیا بدل گئی

    وعدہ وہ اپنے آنے کا پورا نہ کر سکا

    شاید شب فراق کوئی چال چل گئی

    یہ میری تربیت کا کرشمہ نہ ہو کوئی

    اولاد میری مجھ سے بھی آگے نکل گئی

    تھا جو یقیں نزول بلا کا نجومی کو

    مجھ کو یقیں ہے شوقؔ دعا سے وہ ٹل گئی

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY