بیچ جنگل میں پہنچ کے کتنی حیرانی ہوئی

جمال احسانی

بیچ جنگل میں پہنچ کے کتنی حیرانی ہوئی

جمال احسانی

MORE BY جمال احسانی

    بیچ جنگل میں پہنچ کے کتنی حیرانی ہوئی

    اک صدا آئی اچانک جانی پہچانی ہوئی

    پھر وہی چھت پر اکیلے ہم وہی ٹھنڈی ہوا

    کتنے اندیشے بڑھے جب رات طوفانی ہوئی

    ہو گئی دور ان گنت ویراں گزر گاہوں کی کوفت

    ایک بستی سے گزرنے میں وہ آسانی ہوئی

    اس نے بارش میں بھی کھڑکی کھول کے دیکھا نہیں

    بھیگنے والوں کو کل کیا کیا پریشانی ہوئی

    گرد رہ کے بیٹھتے ہی دیکھتا کیا ہوں جمالؔ

    جانی پہچانی ہوئی ہر شکل انجانی ہوئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY