aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

بیمار غم کا کوئی مداوا نہ کیجیے

طالب باغپتی

بیمار غم کا کوئی مداوا نہ کیجیے

طالب باغپتی

MORE BYطالب باغپتی

    دلچسپ معلومات

    (اگست 1928 ء ؁)

    بیمار غم کا کوئی مداوا نہ کیجیے

    یعنی ستم گری بھی گوارا نہ کیجیے

    رسوائی ہے تو یہ بھی گوارا نہ کیجیے

    یعنی پس خیال بھی آیا نہ کیجیے

    ظرف نگاہ چاہیے دیدار کے لئے

    رخ کو پس نقاب چھپایا نہ کیجیے

    دل شوق سے جلائیے انکار ہے کسے

    لیکن جلا جلا کے بجھایا نہ کیجیے

    پردہ نگاہ کا ہے تو کیسی خصوصیت

    اپنی نگاہ ناز سے پردا نہ کیجیے

    کل غیر کی گلی میں قیامت کا ذکر تھا

    شرمائیے حضور بہانا نہ کیجیے

    بس آپ کا ستم ہی کرم ہے مرے لیے

    للہ غیر سے مجھے پوچھا نہ کیجیے

    پابندۂ وفا ہے تو پھر مدعا سے کام

    مر جائیے کسی کی تمنا نہ کیجیے

    طالبؔ حدیث عشق توجہ طلب سہی

    یوں داستاں بنا کے سنایا نہ کیجیے

    مأخذ:

    شاخ نبات (Pg. 190)

    • مصنف: طالب باغپتی
      • ناشر: منشی ہر پرشاد
      • سن اشاعت: 1936

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے