بکھرتے ٹوٹتے لمحوں کو اپنا ہم سفر جانا

مخمور سعیدی

بکھرتے ٹوٹتے لمحوں کو اپنا ہم سفر جانا

مخمور سعیدی

MORE BYمخمور سعیدی

    بکھرتے ٹوٹتے لمحوں کو اپنا ہم سفر جانا

    کہ تھا اس راہ میں آخر ہمیں خود بھی بکھر جانا

    سر دوش ہوا اک ابر پارے کی طرح ہم ہیں

    کسی جھونکے سے پوچھیں گے کہ ہے ہم کو کدھر جانا

    دل آوارہ کیا پابند زنجیر تعلق ہو

    نہ تھا بس میں کسی کے بھی ہوا کو قید کر جانا

    پس ظلمت کوئی سورج ہمارا منتظر ہوگا

    اسی اک وہم کو ہم نے چراغ رہگذر جانا

    ہمیں تو ساتھ دینا ہے رفیقان تلاطم کا

    مبارک تجھ کو تنہا اس ندی کے پار اتر جانا

    مرے جلتے ہوئے گھر کی نشانی بس یہی ہوگی

    جہاں اس شہر میں کچھ روشنی دیکھو، ٹھہر جانا

    سہانے موسموں کی یاد سکھلایا تجھے کس نے

    افق پر دیدہ و دل کے دھنک بن کر بکھر جانا

    حصار ضبط میں رہ کر مآل حسرت دل کیا

    کسی قیدی پرندے کی طرح گھٹ گھٹ کے مر جانا

    دیار خامشی سے کوئی رہ رہ کر بلاتا ہے

    ہمیں مخمورؔ اک دن ہے اسی آواز پر جانا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY