بول دیتی ہے بے زبانی بھی

انیتا موریہ انوشری

بول دیتی ہے بے زبانی بھی

انیتا موریہ انوشری

MORE BY انیتا موریہ انوشری

    بول دیتی ہے بے زبانی بھی

    خاموشی کے کئی معانی بھی

    وقت بے وقت ہی نکل آئے

    ہے عجب آنکھ کا یہ پانی بھی

    وہ سبب ہے میری اداسی کا

    اس سے ہے دوستی پرانی بھی

    وہ مراسم بڑھا کے چھوڑ گیا

    درد ہوتا ہے جاودانی بھی

    آج پھر قیس کو ہی مرنا پڑا

    ہو گئی ختم یہ کہانی بھی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY