بجھا چراغ ہواؤں کا سامنا کر کے

رفیق راز

بجھا چراغ ہواؤں کا سامنا کر کے

رفیق راز

MORE BYرفیق راز

    بجھا چراغ ہواؤں کا سامنا کر کے

    بہت اداس ہوا ہوں دریچہ وا کر کے

    سکوت ٹوٹ گیا اور روشنی سی ہوئی

    شرار سنگ سے نکلا خدا خدا کر کے

    کھلا نہ دن کو کسی اسم سے وہ آہنی در

    اب آؤ دیکھتے ہیں رات کو صدا کر کے

    اڑوں گا خاک سا پہلے پہل اور آخر کار

    ہوائے تند کو رکھ دوں گا میں صبا کر کے

    وہ جس کے بوجھ سے خم بھی نہ تھی ہماری کمر

    ہم آج آئے ہیں وہ قرض بھی ادا کر کے

    مأخذ :
    • کتاب : Nakhl-e-Aab (Pg. 41)
    • Author : Rafeeq Raaz
    • مطبع : Takbeer Publications, Srinagar (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے