بجھے بجھے سے چراغوں سے سلسلہ پایا

شاہد ماہلی

بجھے بجھے سے چراغوں سے سلسلہ پایا

شاہد ماہلی

MORE BYشاہد ماہلی

    بجھے بجھے سے چراغوں سے سلسلہ پایا

    ہجوم یاس میں بھٹکے تو راستہ پایا

    کسی خیال میں ابھرا امید کا چہرہ

    کسی امید میں پرتو خیال کا پایا

    نہ جانے کتنے گھروندوں کو ٹوٹتے دیکھا

    کسی کھنڈر میں تمنا کا نقش پا پایا

    تمام رات نیا بت تراشتے گزری

    ہوئی جو صبح تو اس بت کو ٹوٹتا پایا

    قدم قدم پہ ملے یوں تو قہقہے بکھرے

    درون جسم کوئی شخص چیختا پایا

    طلسم ٹوٹ گیا دھند چھٹ گئی شاہدؔ

    کہیں پہ ٹھہر کے سوچیں کہ ہم نے کیا پایا

    مآخذ :
    • کتاب : Aazadi ke baad dehli men urdu gazal (Pg. 204)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY