بجھتے ہوئے چراغ فروزاں کریں گے ہم

واصف دہلوی

بجھتے ہوئے چراغ فروزاں کریں گے ہم

واصف دہلوی

MORE BYواصف دہلوی

    بجھتے ہوئے چراغ فروزاں کریں گے ہم

    تم آؤگے تو جشن چراغاں کریں گے ہم

    باقی ہے خاک کوئے محبت کی تشنگی

    اپنے لہو کو اور بھی ارزاں کریں گے ہم

    بیچارگی کے ہو گئے یہ چارہ گر شکار

    اب خود ہی اپنے درد کا درماں کریں گے ہم

    جوش جنوں سے جامۂ ہستی ہے تار تار

    کیونکر علاج تنگی داماں کریں گے ہم

    اے چارہ ساز دل کی لگی کا ہے کیا علاج

    کہنے سے تیرے سیر گلستاں کریں گے ہم

    کیا غم جو حسرتوں کے دیے بجھ گئے تمام

    داغوں سے آج گھر میں چراغاں کریں گے ہم

    واصفؔ کا انتظار ہے تھم جاؤ دوستو

    دم بھر میں طے حدود بیاباں کریں گے ہم

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    بجھتے ہوئے چراغ فروزاں کریں گے ہم نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY