برا ہی کیا تھا جو آپ اپنی مثال ہوتے کمال ہوتے

عابد عمر

برا ہی کیا تھا جو آپ اپنی مثال ہوتے کمال ہوتے

عابد عمر

MORE BYعابد عمر

    برا ہی کیا تھا جو آپ اپنی مثال ہوتے کمال ہوتے

    کسی طرح سے جو ٹوٹے رشتے بحال ہوتے کمال ہوتے

    یہ لیلیٰ مجنوں یہ ہیر رانجھا یہ شیریں فرہاد کی محبت

    تھی ایسی شدت کہیں جو ان کے وصال ہوتے کمال ہوتے

    پڑھا نہیں تھا نصاب الفت عمل میں آگے تھے ہر کسی سے

    سمجھتی دنیا اگر ہمیں بے مثال ہوتے کمال ہوتے

    وہ مجھ سے ملتا خموش رہتا خموشیوں پر ہی داد پاتا

    مگر جو نظروں سے منفرد سے سوال ہوتے کمال ہوتے

    یہ کیا کہ تنہائیوں سے رشتہ بنا کے خود کو گنوا لیا ہے

    سما کے مجھ میں جو آپ میرا جمال ہوتے کمال ہوتے

    جسے بھی دیکھا اسی کو دعوائے حسن کرتے سنا گیا ہے

    جہان بھر میں حسیں اگر خال خال ہوتے کمال ہوتے

    نصیب اپنا سخنوروں میں ہماری گنتی نہ ہو سکے گی

    عمرؔ اداکار ہم اگر با کمال ہوتے کمال ہوتے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے