بتوں کا ذکر کر واعظ خدا کو کس نے دیکھا ہے

حاتم علی مہر

بتوں کا ذکر کر واعظ خدا کو کس نے دیکھا ہے

حاتم علی مہر

MORE BYحاتم علی مہر

    بتوں کا ذکر کر واعظ خدا کو کس نے دیکھا ہے

    شرار سنگ موسیٰ کے لیے برق تجلیٰ ہے

    یہ ہندستان ہے یاں پر بتوں کا روز میلہ ہے

    خدا جانے وہ بت اے مہرؔ دیوی ہے کہ درگا ہے

    تصور اس صنم کا ہے ہمیں کعبہ سے کیا مطلب

    چراغ اپنا ہے داغ دل ہے جو مندر میں جلتا ہے

    جدا ہے نعمت دنیا سے لذت بوسۂ لب کی

    وہ جوگی ہو گیا جس نے یہ موہن بھوگ چکھا ہے

    بتا جائز ہے کس مذہب میں خون بے گناہ ظالم

    تو ہندو ہے مسلماں ہے یہودی ہے کہ ترسا ہے

    کیا کافر نے کافر مہرؔ سے مرد مسلماں کو

    جنیوو رشتۂ تسبیح داغ سجدہ ٹیکہ ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Ghazal Usne Chhedi(3) (Pg. 147)
    • Author : Farhat Ehsas
    • مطبع : Rekhta Books (2017)
    • اشاعت : 2017

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY