بزدلی تو وہ کر نہیں سکتا

محمد علی ساحل

بزدلی تو وہ کر نہیں سکتا

محمد علی ساحل

MORE BYمحمد علی ساحل

    بزدلی تو وہ کر نہیں سکتا

    جو ہے سچا وہ ڈر نہیں سکتا

    جسم دنیا بھلے ہی دفنا دے

    پیار زندہ ہے مر نہیں سکتا

    بھوک میں صرف چاہیے روٹی

    پیٹ باتوں سے بھر نہیں سکتا

    جھوٹ چاہے بلند ہو کتنا

    سچ کے آگے ٹھہر نہیں سکتا

    آپ دیکھیں تو اس کا حسن بڑھے

    آئنہ خود سنور نہیں سکتا

    جو بھی ساحل کا ہے تماشائی

    پار دریا وہ کر نہیں سکتا

    مأخذ :
    • کتاب : Kirdaar (Pg. 57)
    • Author : Mohammed Ali Sahil
    • مطبع : Voice Publication (2014)
    • اشاعت : 2014

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے