چاند اوجھل ہو گیا ہر اک ستارا بجھ گیا

احمد ہمدانی

چاند اوجھل ہو گیا ہر اک ستارا بجھ گیا

احمد ہمدانی

MORE BY احمد ہمدانی

    چاند اوجھل ہو گیا ہر اک ستارا بجھ گیا

    آندھیاں ایسی چلیں پھر دل ہمارا بجھ گیا

    اب تو ہم ہیں اور سمندر اور ہوائیں اور رات

    دور سے کرتا تھا جھلمل اک کنارا بجھ گیا

    گھورتے ہیں لوگ بیٹھے کیا خلاؤں میں کہ اب

    ہر اشارہ بجھ گیا ہے ہر سہارا بجھ گیا

    ہر نظر کے سامنے اب بے کراں پہلی سی ریت

    جگمگاتا بات کرتا دشت سارا بجھ گیا

    جم گئی ہے برف کیسی ہر طرف لوگو یہاں

    راکھ تک ٹھنڈی پڑی کیا کیا شرارا بجھ گیا

    شہر چپ ہیں راستے خاموش ہیں چہرے اداس

    بس بگولے اڑ رہے ہیں ہر نظارا بجھ گیا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    احمد ہمدانی

    احمد ہمدانی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY