چاند سا چہرہ جو اس کا آشکارا ہو گیا

مرزارضا برق ؔ

چاند سا چہرہ جو اس کا آشکارا ہو گیا

مرزارضا برق ؔ

MORE BYمرزارضا برق ؔ

    چاند سا چہرہ جو اس کا آشکارا ہو گیا

    تن پہ ہر قطرہ پسینہ کا شرارا ہو گیا

    چھپ سکا دم بھر نہ راز دل فراق یار میں

    وہ نہاں جس دم ہوا سب آشکارا ہو گیا

    جس کو دیکھا چشم وحدت سے وہی معشوق ہے

    پڑ گئی جس پر نظر اس کا نظارا ہو گیا

    ہم کناری کی ہوس اے گوہر یکتا یہ ہے

    آب ہو کر غم سے دل دریا ہمارا ہو گیا

    خلق میں گرد یتیمی سے گہر کی قدر ہے

    خاکساری سے فزوں رتبہ ہمارا ہو گیا

    دل میں ہے اے برقؔ اس بت کے در دنداں کی یاد

    یہ گہر عرش بریں کا گوشوارہ ہو گیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے