چل دیے ہم اے غم عالم وداع

غلام مولیٰ قلق

چل دیے ہم اے غم عالم وداع

غلام مولیٰ قلق

MORE BY غلام مولیٰ قلق

    چل دیے ہم اے غم عالم وداع

    شور ماتم تا کجا ماتم وداع

    جاتے ہی تیرے ہر اک کا کوچ ہے

    جاں وداع و دل وداع و دم وداع

    روز میت بھی نہیں کم عید سے

    پہلے رحلت سے ہوا ہر غم وداع

    ہے قیامت ایک دن اس کا قیام

    دل کو کر اے طرۂ خوش خم وداع

    اس کا رستہ کوئے غیر اور اپنا خلد

    وہ ادھر رخصت ادھر ہیں ہم وداع

    غیر کی خاطر ہے تو جانے بھی دو

    کیجئے اس کو خوش و خرم وداع

    ہائے رے عمر رواں کا قافلہ

    ہر قدم ہر آن ہے ہر دم وداع

    کیوں نہ ہوں آغوش حسرت صبح و شام

    روز و شب عالم سے ہے عالم وداع

    ہے بہ قدر حوصلہ یاں اتفاق

    جام سے ہرگز نہ ہوگا جم وداع

    سن چکا ہوں میں ترا عزم سفر

    آنکھ سے میری نہ ہوگا نم وداع

    حسرت بے اختیاری دیکھنا

    تن سے جاں ہوتی ہے کیا تھم تھم وداع

    اب کہاں صبر و قرار و تاب و ہوش

    ساتھ ہی اس کے ہوئے پیہم وداع

    لا تعین بے نشانی نے کیا

    کیجئے آرام رخصت رم وداع

    مہلت رنگ چمن خوں کیوں نہ ہو

    ہو گئی جب فرصت شبنم وداع

    اے قلقؔ چلیے کہ منزل دور ہے

    ہو رہیں گے یار سب باہم وداع

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites