چلا جاتا ہے کاروان نفس

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

چلا جاتا ہے کاروان نفس

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    چلا جاتا ہے کاروان نفس

    نہ بانگ درا ہے نہ صوت جرس

    برس کتنے گزرے یہ کہتے ہوئے

    کہ کچھ کام کر لیں گے اب کے برس

    نہ وہ پوچھتے ہیں نہ کہتا ہوں میں

    رہی جاتی ہے دل کی دل میں ہوس

    وہ حسرت زدہ صید میں ہی تو ہوں

    ہے پرواز جس کی دردن ہوس

    ستم ہیں یہ وحشتؔ تری غفلتیں

    تجھے کاش ہوتا شمار نفس

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    چلا جاتا ہے کاروان نفس نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY