چمکتے چاند سے چہروں کے منظر سے نکل آئے

فضیل جعفری

چمکتے چاند سے چہروں کے منظر سے نکل آئے

فضیل جعفری

MORE BYفضیل جعفری

    چمکتے چاند سے چہروں کے منظر سے نکل آئے

    خدا حافظ کہا بوسہ لیا گھر سے نکل آئے

    یہ سچ ہے ہم کو بھی کھونے پڑے کچھ خواب کچھ رشتے

    خوشی اس کی ہے لیکن حلقۂ شر سے نکل آئے

    اگر سب سونے والے مرد عورت پاک طینت تھے

    تو اتنے جانور کس طرح بستر سے نکل آئے

    دکھائی دے نہ دے لیکن حقیقت پھر حقیقت ہے

    اندھیرے روشنی بن کر سمندر سے نکل آئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY