چراغ حسن ہے روشن کسی کا

بیان میرٹھی

چراغ حسن ہے روشن کسی کا

بیان میرٹھی

MORE BYبیان میرٹھی

    چراغ حسن ہے روشن کسی کا

    ہمارا خون ہے روغن کسی کا

    ابھی نادان ہیں محشر کے فتنے

    رہیں تھامے ہوئے دامن کسی کا

    دل آیا ہے قیامت ہے مرا دل

    اٹھے تعظیم دے جوبن کسی کا

    یہ محشر اور یہ محشر کے فتنے

    کسی کی شوخیاں بچپن کسی کا

    ادائیں تا ابد بکھری پڑی ہیں

    ازل میں پھٹ پڑا جوبن کسی کا

    کیا تلوار نے گھونگھٹ مرے بعد

    نہ منہ دیکھے گی یہ دلہن کسی کا

    ہماری خاک محشر تک اڑی ہے

    نہ ہاتھ آیا مگر دامن کسی کا

    بجائے گل مری تربت پہ ہوں خار

    کہ الجھے گوشۂ دامن کسی کا

    بیاںؔ برق بلا چتون کسی کی

    دل پر آرزو خرمن کسی کا

    مآخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY