چشم حیرت سارے منظر ایک جیسے ہو گئے

خوشبیر سنگھ شادؔ

چشم حیرت سارے منظر ایک جیسے ہو گئے

خوشبیر سنگھ شادؔ

MORE BYخوشبیر سنگھ شادؔ

    چشم حیرت سارے منظر ایک جیسے ہو گئے

    دیکھ لے صحرا سمندر ایک جیسے ہو گئے

    جاگتی آنکھوں کو میری بارہا دھوکا ہوا

    خواب اور تعبیر اکثر ایک جیسے ہو گئے

    وقت نے ہر ایک چہرہ ایک جیسا کر دیا

    آرزو کے سارے پیکر ایک جیسے ہو گئے

    جب سے ہم کو ٹھوکریں کھانے کی عادت ہو گئی

    راستوں کے سارے پتھر ایک جیسے ہو گئے

    دیدۂ تر کی کہانی اب مکمل ہو گئی

    درد سب اشکوں میں گھل کر ایک جیسے ہو گئے

    شادؔ اتنی بڑھ گئی ہیں میرے دل کی وحشتیں

    اب جنوں میں دشت اور گھر ایک جیسے ہو گئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY