چہرہ لالہ رنگ ہوا ہے موسم رنج و ملال کے بعد

ظفر گورکھپوری

چہرہ لالہ رنگ ہوا ہے موسم رنج و ملال کے بعد

ظفر گورکھپوری

MORE BYظفر گورکھپوری

    چہرہ لالہ رنگ ہوا ہے موسم رنج و ملال کے بعد

    ہم نے جینے کا گر جانا زہر کے استعمال کے بعد

    کس کو خبر تھی مختاری میں ہوں گے وہ اتنے مجبور

    ہم اپنے سے شرمندہ ہیں ان سے عرض حال کے بعد

    اپنے سوا اپنے رشتے میں اور بھی کچھ دنیائیں تھیں

    ہم نے اپنا حال لکھا لیکن دیگر احوال کے بعد

    آنکھیں یوں ہی بھیگ گئیں کیا دیکھ رہے ہو آنکھوں میں

    بیٹھو صاحب کہو سنو کچھ ملے ہو کتنے سال کے بعد

    توڑے کتنے آئینے اور چھان لیے کتنے آفاق

    کوئی نہ منظر آنکھ میں ٹھہرا اس کے عکس جمال کے بعد

    نقش گری کا بوتا ہو تو دھوپ چھاؤں میں رنگ بہت

    چہرہ خود بن جائے گا ٹیڑھی میڑھی اشکال کے بعد

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY