چہرے مکان راہ کے پتھر بدل گئے

فضیل جعفری

چہرے مکان راہ کے پتھر بدل گئے

فضیل جعفری

MORE BYفضیل جعفری

    چہرے مکان راہ کے پتھر بدل گئے

    جھپکی جو آنکھ شہر کے منظر بدل گئے

    شہروں میں ہنستی کھیلتی چلتی رہی مگر

    جنگل میں باد صبح کے تیور بدل گئے

    ہاں اس میں کامدیو کی کوئی خطا نہیں

    رستے وفا کے سخت تھے دلبر بدل گئے

    وہ آندھیاں چلی ہیں سر دشت آرزو

    دل بجھ گیا وفاؤں کے محور بدل گئے

    پھوٹی کرن تو جاگ اٹھی زندگی فضیلؔ

    سنسان راستوں کے مقدر بدل گئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY