چھلک کے کم نہ ہو ایسی کوئی شراب نہیں

فراق گورکھپوری

چھلک کے کم نہ ہو ایسی کوئی شراب نہیں

فراق گورکھپوری

MORE BYفراق گورکھپوری

    چھلک کے کم نہ ہو ایسی کوئی شراب نہیں

    نگاہ نرگس رعنا ترا جواب نہیں

    زمین جاگ رہی ہے کہ انقلاب ہے کل

    وہ رات ہے کوئی ذرہ بھی محو خواب نہیں

    حیات درد ہوئی جا رہی ہے کیا ہوگا

    اب اس نظر کی دعائیں بھی مستجاب نہیں

    زمین اس کی فلک اس کا کائنات اس کی

    کچھ ایسا عشق ترا خانماں خراب نہیں

    ابھی کچھ اور ہو انسان کا لہو پانی

    ابھی حیات کے چہرے پر آب و تاب نہیں

    جہاں کے باب میں تر دامنوں کا قول یہ ہے

    یہ موج مارتا دریا کوئی سراب نہیں

    دکھا تو دیتی ہے بہتر حیات کے سپنے

    خراب ہو کے بھی یہ زندگی خراب نہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Irtiqa, 36 Firaaq No. (Pg. 427)
    • Author : Hasan Abid, Wahid Bashiir, Rahat Sayeed
    • مطبع : Irtiqa Matbuaat, Karachi, (pakistan)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY