چھیڑ کر تذکرۂ دور جوانی رویا

جعفر طاہر

چھیڑ کر تذکرۂ دور جوانی رویا

جعفر طاہر

MORE BYجعفر طاہر

    چھیڑ کر تذکرۂ دور جوانی رویا

    رات یاروں کو سنا کر میں کہانی رویا

    ذکر تھا کوچہ و بازار کے ہنگاموں کا

    جانے کیا سوچ کے وہ یوسف ثانی رویا

    غیرت عشق نے کیا کیا نہ بہائے آنسو

    سن کے باتیں تری غیروں کی زبانی رویا

    جب بھی دیکھی ہے کسی چہرے پہ اک تازہ بہار

    دیکھ کر میں تری تصویر پرانی رویا

    چشم ارباب وفا ہے جو لہو روتی ہے

    غیر پھر غیر ہے رویا بھی تو پانی رویا

    تیری مہکی ہوئی سانسوں کی لویں یاد آئیں

    آج تو دیکھ کے میں صبح سہانی رویا

    اے وطن جب بھی سر دشت کوئی پھول کھلا

    دیکھ کر تیرے شہیدوں کی نشانی رویا

    مآخذ
    • کتاب : Ghazal Calendar-2015 (Pg. 07.04.2015)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY