چٹکیاں لیتی ہے گویائی کسے آواز دوں

بلراج حیات

چٹکیاں لیتی ہے گویائی کسے آواز دوں

بلراج حیات

MORE BYبلراج حیات

    چٹکیاں لیتی ہے گویائی کسے آواز دوں

    کس کو ہے توفیق شنوائی کسے آواز دوں

    سر میں سودا ہے نہ دل میں آرزو کس سے کہوں

    جلوتیں مانگے ہے تنہائی کسے آواز دوں

    اپنی نظروں میں تو میرا زعم ہستی لغو ہے

    کس سے پوچھوں اپنی سچائی کسے آواز دوں

    بیچ دوں گا میں ضمیر اپنا اگر تسکیں ملے

    اے مسلسل روح فرسائی کے آواز دوں

    میری حسرت کوئی پوچھے مجھ سے میرا حال دل

    لوگ اپنے اپنے شیدائی کسے آواز دوں

    آزمائش کا یہ پہلو بھی ہے کیا معلوم تھا

    کامرانی کی گھڑی آئی کسے آواز دوں

    کس کے نام آخر کروں حیرتؔ میں اپنی وحشتیں

    منتظر ہے دشت پیمائی کسے آواز دوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY