دائم سراب اک مرے اندر ہے کیا کروں

سلمان اختر

دائم سراب اک مرے اندر ہے کیا کروں

سلمان اختر

MORE BYسلمان اختر

    دائم سراب اک مرے اندر ہے کیا کروں

    صحرا مری نظر میں سمندر ہے کیا کروں

    دیکھے جو میری نیکی کو شک کی نگاہ سے

    وہ آدمی بھی تو مرے اندر ہے کیا کروں

    یک گونہ بے خودی کو ہی اب ڈھونڈھتا ہے دل

    غم اور خوشی کا بوجھ برابر ہے کیا کروں

    اچھا تو ہے کہ سب سے ملوں ایک ہی طرح

    لیکن وہ اور لوگوں سے بہتر ہے کیا کروں

    ملتے ہیں یوں تو لوگ بظاہر بہت گلے

    ہر آستین میں کوئی خنجر ہے کیا کروں

    مأخذ :
    • کتاب : Soch Samajh (Pg. 52)
    • Author : Salman Akhtar
    • مطبع : Star Publishers Pvt.Ltd, N. Delhi (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY