دامن صبا نہ چھو سکے جس شہ سوار کا

محمد رفیع سودا

دامن صبا نہ چھو سکے جس شہ سوار کا

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    دامن صبا نہ چھو سکے جس شہ سوار کا

    پہنچے کب اس کو ہاتھ ہمارے غبار کا

    موج نسیم آج ہے آلودہ گرد سے

    دل خاک ہو گیا ہے کسی بے قرار کا

    خون جگر شراب و ترشح ہے چشم تر

    ساغر مرا گرو نہیں ابر بہار کا

    چشم کرم سے عاشق وحشی اسیر ہو

    الفت ہے دام آہوئے دل کے شکار کا

    سونپا تھا کیا جنوں نے گریبان کو مرے

    لیتا ہے اب حساب جو یہ تار تار کا

    سوداؔ شراب عشق نہ کہتے تھے ہم، نہ پی

    پایا مزا نہ تو نے اب اس کے خمار کا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY