دخل ہر دل میں ترا مثل سویدا ہو گیا

شیخ علی بخش بیمار

دخل ہر دل میں ترا مثل سویدا ہو گیا

شیخ علی بخش بیمار

MORE BYشیخ علی بخش بیمار

    دخل ہر دل میں ترا مثل سویدا ہو گیا

    الاماں اے زلف عالمگیر سودا ہو گیا

    گو پڑا رہتا ہوں آب اشک میں مثل حباب

    سوزش دل سے مگر سب جسم چھالا ہو گیا

    اے شہ خوباں تصور سے ترے رخسار کے

    چشم کا پردا بعینہ لعل پردا ہو گیا

    فرق رندان و ملائک اب بہت دشوار ہے

    مے کدہ اس کے قدم سے روشن ایسا ہو گیا

    دانۂ انگور اختر چاندنی مے ماہ جام

    نثر طائر بط قرابا چرخ مینا ہو گیا

    سنتے ہیں تائب ہوا اس بت کے گھر جانے سے تو

    کیا ترا بیمارؔ پتھر کا کلیجا ہو گیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY