دم اخیر بھی ہم نے زباں سے کچھ نہ کہا

شیر سنگھ ناز دہلوی

دم اخیر بھی ہم نے زباں سے کچھ نہ کہا

شیر سنگھ ناز دہلوی

MORE BYشیر سنگھ ناز دہلوی

    دم اخیر بھی ہم نے زباں سے کچھ نہ کہا

    جہاں سے اٹھ گئے اہل جہاں سے کچھ نہ کہا

    چلی جو کشتئ عمر رواں تو چلنے دی

    رکی تو کشتئ عمر رواں سے کچھ نہ کہا

    خطائے عشق کی اتنی سزا ہی کافی تھی

    بدل کے رہ گئے تیور زباں سے کچھ نہ کہا

    بلا سے خاک ہوا جل کے آشیاں اپنا

    تڑپ کے رہ گئے برق تپاں سے کچھ نہ کہا

    گلہ کیا نہ کبھی ان سے بے وفائی کا

    زباں تھی لاکھ دہن میں زباں سے کچھ نہ کہا

    خوشی سے رنج سہے نازؔ عمر بھر ہم نے

    خدا گواہ کبھی آسماں سے کچھ نہ کہا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    دم اخیر بھی ہم نے زباں سے کچھ نہ کہا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY