درد شایان شان دل بھی نہیں

ذاکر خان ذاکر

درد شایان شان دل بھی نہیں

ذاکر خان ذاکر

MORE BYذاکر خان ذاکر

    درد شایان شان دل بھی نہیں

    اور شب ہجر مستقل بھی نہیں

    یوں گلے مل کے فائدہ کیا ہے

    زخم اندر سے مندمل بھی نہیں

    وصل بھی ہے فراق بھی اس میں

    موسم عشق معتدل بھی نہیں

    ہر کسی سے یہ میل کیوں کھائے

    دل تو پھر دل ہے آب و گل بھی نہیں

    سوچ ہے کچھ حقیقتیں کچھ ہیں

    خواب تعبیر متصل بھی نہیں

    اب بھی جاری ہے رقص مٹی کا

    سانس کے تار مضمحل بھی نہیں

    ہم جو روٹھے ہیں جان سے ذاکرؔ

    ربط ٹوٹا ہے منفصل بھی نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY