درد اٹھ اٹھ کے یہ کہتا ہے رگ جاں کے قریب

آر پی شوخ

درد اٹھ اٹھ کے یہ کہتا ہے رگ جاں کے قریب

آر پی شوخ

MORE BYآر پی شوخ

    درد اٹھ اٹھ کے یہ کہتا ہے رگ جاں کے قریب

    ابھی زنداں میں ہوں لیکن در زنداں کے قریب

    آگ جنگل بھری نیندوں میں لگانے والے

    تم بھی آنا نہ مرے خواب پریشاں کے قریب

    خشک آنکھوں میں ترے خواب بساؤں کیسے

    کوئی چشمہ بھی ضروری ہے بیاباں کے قریب

    سردیوں کی یہ خنک دھوپ بھی پگھلانے لگی

    جیسے بیٹھا ہوں اسی شعلہ بداماں کے قریب

    آنکھ کھلتے ہی نہ وہ تھا نہ چراغاں نہ خمار

    رات گزری تھی کسی چاند سے مہماں کے قریب

    ڈوب جاتا ہوں میں ہر صبح افق میں دل کے

    شہر جاناں سے پرے شہر خموشاں کے قریب

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے