دستک ہوا نے دی ہے ذرا غور سے سنو

حمایت علی شاعر

دستک ہوا نے دی ہے ذرا غور سے سنو

حمایت علی شاعر

MORE BYحمایت علی شاعر

    دستک ہوا نے دی ہے ذرا غور سے سنو

    طوفاں کی آ رہی ہے صدا غور سے سنو

    شاخیں اٹھا کے ہاتھ دعا مانگنے لگیں

    سرگوشیاں چمن میں ہیں کیا غور سے سنو

    محسوس کر رہا ہوں میں کرب شکستگی

    تم بھی شگفت گل کی صدا غور سے سنو

    گل چیں کو دیکھ لیتی ہے جب کوئی شاخ گل

    دیتی ہے بد دعا کہ دعا غور سے سنو

    یہ اور بات خشک ہیں آنکھیں مگر کہیں

    کھل کر برس رہی ہے گھٹا غور سے سنو

    شاخوں سے ٹوٹتے ہوئے پتوں کو دیکھ کر

    روتی ہے منہ چھپا کے ہوا غور سے سنو

    یہ دشت بے کراں یہ پر اسرار خامشی

    اور دور اک صدائے ذرا غور سے سنو

    یہ بازگشت میری صدا کی ہے یا مجھے

    آواز دے رہا ہے خدا غور سے سنو

    بڑھتی چلی ہے ارض و سما میں کشیدگی

    کونین میں ہے حشر بپا غور سے سنو

    کب تک زمیں اٹھائے رہے آسماں کا بوجھ

    اب ٹوٹتی ہے رسم وفا غور سے سنو

    میں ٹوٹتا ہوں خیر مجھے ٹوٹنا ہی ہے

    دھرتی چٹخ رہی ہے ذرا غور سے سنو

    صحرا میں چیختے ہیں بگولے تو شہر شہر

    اک شور ہے سکوت فزا غور سے سنو

    شاعرؔ تراشتے تو ہو دل میں خدا کا بت

    آوازۂ شکست انا غور سے سنو

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    حمایت علی شاعر

    حمایت علی شاعر

    حمایت علی شاعر

    حمایت علی شاعر

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    دستک ہوا نے دی ہے ذرا غور سے سنو نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے