دیکھ نہ اس طرح گزار عرصۂ چشم سے مجھے

ادریس بابر

دیکھ نہ اس طرح گزار عرصۂ چشم سے مجھے

ادریس بابر

MORE BYادریس بابر

    دیکھ نہ اس طرح گزار عرصۂ چشم سے مجھے

    فرصت دید ہو نہ ہو مہلت خواب دے مجھے

    بسکہ گزشتنی ہے وقت بسکہ شکستنی ہے دل

    خواب کوئی دکھا کہ جو یاد نہ آ سکے مجھے

    خام ہی رکھ کے پختگی شکل ہے اک شکست کی

    آتش وصل کی جگہ خاک فراق دے مجھے

    ہاں اے غبار آشنا میں بھی تھا ہم سفر ترا

    پی گئیں منزلیں تجھے کھا گئے راستے مجھے

    دیر سے رو نہیں سکا دور ہوں سو نہیں سکا

    غم جو رلا سکے مجھے سم جو سلا سکے مجھے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے