دیکھا جو حسن یار طبیعت مچل گئی

جلیل مانک پوری

دیکھا جو حسن یار طبیعت مچل گئی

جلیل مانک پوری

MORE BY جلیل مانک پوری

    دیکھا جو حسن یار طبیعت مچل گئی

    آنکھوں کا تھا قصور چھری دل پہ چل گئی

    ہم تم ملے نہ تھے تو جدائی کا تھا ملال

    اب یہ ملال ہے کہ تمنا نکل گئی

    ساقی تری شراب جو شیشے میں تھی پڑی

    ساغر میں آ کے اور بھی سانچے میں ڈھل گئی

    دشمن سے پھر گئی نگہ یار شکر ہے

    اک پھانس تھی کہ دل سے ہمارے نکل گئی

    پینے سے کر چکا تھا میں توبہ مگر جلیلؔ

    بادل کا رنگ دیکھ کے نیت بدل گئی

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    دیکھا جو حسن یار طبیعت مچل گئی فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY